متفرق اشعار

ویکی کتب سے
Jump to navigation Jump to search

متفرق اشعار


ہر ایک شکل کو دل سے نکال کر رکھا
یہ آئنہ تری خاطر سنبھال کر رکھا

جو دل دکھا بھی تو ہونٹوں نے پھول برسائے
خوشی کو ہم نے شریکِ ملال کر رکھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم سبو گھر سے نکلتے ہی نہیں اب ناصر
میکدہ رات گئے اب بھی کھلا ہوتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اہل خرد کے ماضی و حال
چند کتابیں چند خیال

دکھ کی دھوپ میں یاد آئے
تیرے ٹھنڈے ٹھنڈے بال

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تیرے بغیر بھی خالی نہیں مری راتیں
ہے ایک سایہ مرے ساتھ ہمنشیں کی طرح

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

قصے تیری نظر نے سنائے نہ پھر کبھی
ہم نے بھی دل کے داغ دکھائے نہ پھر کبھی

اے یادِ دوست آج تو جی بھر کے دل دکھا
شاید یہ رات ہجر کی آئے نہ پھر کبھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چاند نکلا تھا مگر رات نہ تھی پہلی سی
یہ ملاقات، ملاقات نہ تھی پہلی سی

رنج کچھ کم تو ہوا آج تیرے ملنے سے
یہ الگ بات کہ وہ بات نہ تھی پہلی سی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ کیوں رک گئے چلتے چلتے
آپ کو میں نے بلایا تو نہ تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں تو بیتے دنوں کی کھوج میں ہوں
تو کہاں تک چلے گا میرے ساتھ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چین سے بیٹھنے نہیں دیتی
موسمِ یاد کی اداس ہوا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھیلتی جاتی ہے ناصر رنجِ ہستی کی رِدا
اور سمٹتے جا رہے ہیں پاؤں پھیلانے کو ہم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمام عمر یونہی ہم نے دکھ اٹھایا ہے
زیادہ خرچ کیا اور کم کمایا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چار گھڑی یاروں کا میلہ، پھر خاموشی
پہروں تنہا بیٹھ کے رونا پھر خاموشی

اس سے تو ہم سوئے ہی رہتے صبح نہ ہوتی
نیند اڑا کر اڑ گئی چڑیا، پھر خاموشی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہوا بھی چل رہی ہے اور جاگتی ہے رات بھی
کوئی اگر کہے تو ہم سنائیں دل کی بات بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میں دیکھتا ہوں تو بس دیکھتا ہی رہتا ہوں
وہ آئینے میں بھی اپنے ہی رنگ چھوڑ گیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یوں تو اے ہم سخنو بات نہیں کہنے کی
بات رہ جائے گی یہ رات نہیں کہنے کی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نالۂ آخرِ شب کس کو سناؤں ناصر
نیند پیاری ہے مرے دور کے فنکاروں کو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کہیں کہیں کوئی روشنی ہے
جو آتے جاتے سے پوچھتی ہے

کہاں ہے وہ اجنبی مسافر
کہاں گیا وہ اداس شاعر

۔۔۔۔۔۔۔۔
دیوان ناصر کاظمی