زمرہ:ردیف ڑ

وکی کتب سے
Jump to navigation Jump to search

ردیف ڑ

دیوان ِمنصور آفاق

dewan mansoor afaq[ترمیم]

mansoor afaq poetry



 

پہلی غزل



ساعتِ دیدہ ء انکار کے سینے میں دراڑ
دیکھ پڑتی ہوئی دیوار کے سینے میں دراڑ

ایک ہی لفظ سے بھونچال نکل آیا ہے
پڑ گئی ہے کسی کہسار کے سینے میں دراڑ

کوئی شے ٹوٹ گئی ہے مرے اندر شاید
آ گئی ہے مرے پندار کے سینے میں دراڑ

چاٹتی جاتی ہے رستے کی طوالت کیا کیا
ایک بنتی ہوئی دلدار کے سینے میں دراڑ

کب بنائو گے مرے شاہ سواروں آخر
موت کی وادی ء اسرار کے سینے میں دراڑ

ایک ہنستی ہوئی پھر چشمِ سیہ نے ڈالی
آ مری صحبتِ آزار کے سینے میں دراڑ

رو پڑا خود ہی لپٹ کر شبِ غم میں مجھ سے
تھی کہانی ترے کردار کے سینے میں دراڑ

روندنے والے پہاڑوں کو پلٹ آئے ہیں
دیکھ کر قافلہ سالار کے سینے میں دراڑ

صبح کی پہلی کرن ! تجھ پہ تباہی آئے
ڈال دی طالع ء بیدارکے سینے میں دراڑ

کل شبِ ہجر میں طوفان کوئی آیا تھا
دیدہ ء نم سے پڑی یار کے سینے میں دراڑ

غم کے ملبے سے نکلتی ہوئی پہلی کوپنل
دیکھ باغیچہ ء مسمار کے سینے میں دراڑ

لفظ کی نوکِ سناں سے بھی کہاں ممکن ہے
وقت کے خانہ ء زنگار کے سینے میں دراڑ

بس قفس سے یہ پرندہ ہے نکلنے والا
نہ بڑھا اپنے گرفتار کے سینے میں دراڑ

شام تک ڈال ہی لیتے ہیں اندھیرے منصور
صبح کے جلوہ ء زرتار کے سینے میں دراڑ




دیوان منصور آفاق  





ردیف ڑ



 

دوسری غزل



وحشتیں اوڑھ ، انتظاری چھوڑ
اب تعلق میں بردباری چھوڑ

دیکھنا چاند کیا سلاخوں سے
کج نظر سارتر سے یاری چھوڑ

دستِ ابلیس سے ثواب نہ پی
یہ تہجد کی بادہ خواری چھوڑ

زندہ قبروں پہ پھول رکھنے آ
مرنے والوں کی غم گساری چھوڑ

مردہ کتے کی دیکھ لے آنکھیں
مشورہ مان ، شہریاری چھوڑ

کچھ تو اعمال میں مشقت رکھ
یہ کرم کی حرام کاری چھوڑ

صبح کی طرح چل! برہنہ ہو
یہ اندھیرے کی پردہ داری چھوڑ

توڑ دے ہجر کے کواڑوں کو
اب دریچوں سے چاند ماری چھوڑ

بھونک اب جتنا بھونک سکتا ہے
ظلم سے التجا گزاری چھوڑ

آج اس سے تُو معذرت کر لے
یہ روایت کی پاس داری چھوڑ

رکھ بدن میں سکوت مٹی کا
یہ سمندر سی بے قراری چھوڑ

چھوڑ آسانیاں مصائب میں
دشت میں اونٹ کی سواری چھوڑ

یہ سفیدی پھری ہوئی قبریں
چھوڑ یہ دوست یہ حواری چھوڑ

شہر ِغالب سے بھاگ جا منصور
میر جیسی غزل نگاری چھوڑ




دیوان منصور آفاق  





اس زمرہ میں ابھی کوئی صفحہ یا میڈیا موجود نہیں ہے۔